اسلام آباد: وزارت داخلہ نے پاکستان میں غیر قانونی طور پر مقیم غیر ملکیوں کے لیے ایمنسٹی اسکیم ختم کرنے کے حوالے سے نیشنل ڈیٹا بیس اینڈ رجسٹریشن اتھارٹی (نادرا) کو خط لکھ دیا ہے۔
تفصیلات کے مطابق نادرا سے کہا گیا ہے کہ وہ زیادہ سے زیادہ قیام کرنے والے غیر ملکیوں کو جرمانہ اور بلیک لسٹ کرے کیونکہ ایمنسٹی اسکیم 31 دسمبر کو ختم ہو رہی ہے۔

Amnesty Scheme for Overstaying Foreigners to Expire on 31 December

Image Source: ProPakistani

زیادہ قیام کرنے والے غیر ملکیوں کے لیے ایمنسٹی اسکیم 31 دسمبر 2022 کو ختم ہو رہی ہے، اور اسے وزارت داخلہ نے 29 جولائی کو متعارف کرایا تھا تاکہ غیر قانونی تارکین وطن کو عارضی طور پر قیام کی اجازت دی جا سکے۔
وزارت داخلہ نے نیشنل ڈیٹا بیس اینڈ رجسٹریشن اتھارٹی (نادرا) کو پاکستان سے باہر رہنے والے غیر ملکیوں کے لیے ایمنسٹی اسکیم کے حوالے سے خط لکھا۔
اس میں کہا گیا ہے کہ غیر ملکیوں کے پاکستان سے باہر نکلنے کے لیے جنرل ایمنسٹی اسکیم کی کٹ آف تاریخ 31 دسمبر 2022 ہے۔
وزارت داخلہ نے مزید کہا کہ نادرا موجودہ پالیسی پر واپس آجائے۔ اس میں مزید کہا گیا کہ نادرا کو یکم جنوری 2023 سے ایک سال سے زائد عرصے کے لیے غیر ملکیوں سے ایگزٹ پرمٹ کے لیے اوور اسٹے چارجز وصول کرنا شروع کر دینا چاہیے۔
وفاقی حکومت نے غیر ملکیوں کے لیے ایمنسٹی اسکیم متعارف کرائی تھی، جس میں ان کے ایگزٹ پرمٹ حاصل کرنے پر بھاری جرمانے کی ادائیگی پر پابندی عائد کی گئی تھی۔
فارنرز ایکٹ 1946 کے مطابق غیر ملکیوں کو زیادہ قیام کرنے پر تین سال کی سزا دی جا سکتی ہے۔