پاکستان سمیت دنیا بھر میں ڈاکٹر بننا انتہائی جان جوکھوں کا کام ہے اور اس کے لیے ایک طالبعلم کو 12 گھنٹے سے زیادہ تعلیم کو دیناپڑتے ہیں تب جاکر وہ ان امتحانات میں 85 % مارکس حاصل کرکے کامیاب ہوتا ہے مگر بعض سٹوڈنٹس ایسے ہوتے ہیں جنہیں خدا تعالیٰ نے بے پناہ ذہن قابلیت اور ٹیلنٹ سے نوازا ہوتا ہے اور یہ ایسا کام کرجاتے ہیان کہ پورے ملک کی توجہ ان کی طرف چلی جاتی ہے ایسا ہی کارنامہ ایم بی بی ایس کے ایک طالب علم محمد ولید ملک نے کیا جنھوں نے ایم بی بی ایس کے امتحانات مٰیں 29 گولڈ میڈل جیت لیے

 

 

 

جو پاکستان کا ہی نہیں دنیا کی تاریخ کا بھی ایک نیا ریکار ڈہے اس سے قبل یہ اعزا ز کنگ ایڈورڈ میڈیکل کالج کی طالبہ نور صبا احمد کے پاس تھا جس نے 2020 میں 23 گولڈ میڈل اپنے نام کیے تھے اور ایک اور ڈاکٹر شہزاد نے ان امتحانات میں 21 گولڈ جیتے تھے -مگراب یہ اعزاز ڈاکٹر ولید نے 29 تمغے جیت کر اپنے نام کرلیا ہے – ان کے اس کارنامے پر ولید کے ماں باپ خوشی سے بہال ہیں