راولپنڈی: پنجاب پولیس نے پاکستان تحریک انصاف (پی ٹی آئی) کے لانگ مارچ کے استقبال کے لیے سیکیورٹی پلان کو حتمی شکل دے دی ہے جس کے ہفتے کو شہر میں داخل ہونے کا امکان ہے۔
وزیر آباد حملے کے بعد عمران خان کے لیے سیکیورٹی پلان کو حتمی شکل دی گئی ہے، سیکیورٹی کے لیے 10 ہزار سے زائد پولیس اہلکار تعینات کیے جائیں گے۔
لانگ مارچ کے قافلے کے روٹ پر عمارتوں پر شارپ شوٹرز تعینات کیے جائیں گے جب کہ سی سی ٹی وی اور ڈرون کیمروں کے ذریعے مارچ کی نگرانی کی جائے گی۔

Three terrorists killed in encounter with CTD - Daily Times

Image Source: Daily Times

ایلیٹ فورس کے کم از کم 15 سیکشن (ہر ایک میں پانچ مکمل مسلح کمانڈوز، ایک گاڑی اور ایک ڈرائیور شامل ہیں) اور 122 کمانڈوز بھی تعینات کیے جائیں گے جبکہ پولیس کے 75 ریزرو پر مشتمل 1500 سے زائد اہلکار اس سے نمٹنے کے لیے اسٹینڈ بائی پر ہوں گے۔
عمران خان کی مارچ میں شرکت کی صورت میں انہیں “سابق وزرائے اعظم کی سیکیورٹی کی طرز پر ایک باکس سیکیورٹی کور” فراہم کیا جائے گا۔
علاوہ ازیں راولپنڈی میں لانگ مارچ کے دوران سابق وزیراعظم عمران خان کے کنٹینر کو خصوصی سیکیورٹی ٹیمیں گھیرے میں لیں گی۔
عمران خان کو سنگین دھمکیاں
پنجاب کے وزیر داخلہ عمر سرفراز چیمہ نے جمعرات کو کہا کہ انٹیلی جنس رپورٹس نے عمران خان کی جان کو لاحق خطرات کی تصدیق کی ہے اور حکومت پاکستان تحریک انصاف (پی ٹی آئی) کے سربراہ کو فول پروف سیکیورٹی فراہم کر رہی ہے۔
اے آر وائی نیوز کے پروگرام ’آف دی ریکارڈ‘ میں گفتگو کرتے ہوئے پنجاب کے وزیر داخلہ عمر سرفراز چیمہ نے کہا کہ وزیر آباد میں عمران خان پر حملے سے قبل حکام کو انٹیلی جنس رپورٹس موصول ہوئی تھیں۔ انہوں نے مزید کہا کہ عمران خان کی جان کو خطرات بڑھ گئے ہیں اور فول پروف سیکیورٹی فراہم کی جارہی ہے۔
حقیقی آزادی مارچ میں شرکت پر عمران خان کو زیادہ سے زیادہ سیکیورٹی فراہم کی جائے گی۔ رپورٹ کے مطابق وزیر آباد بندوق حملے میں دو شوٹر ملوث تھے۔
وزیر داخلہ پنجاب نے الزام لگایا کہ حکمران جماعت پاکستان مسلم لیگ نواز (پی ایم ایل این) مذہبی منافرت پھیلا رہی ہے اور مہم چلا رہی ہے۔ انہوں نے مزید کہا کہ وزیر آباد بندوق کے حملے کو مذہبی انتہا پسندی کا رنگ دینے کی سازش پہلے ہی بے نقاب ہو چکی ہے۔