پاکستان میں کنٹونمنٹ بورڈ کے انتخابات :ووٹوں کی گنتی جاری

پاکستان کے بڑے شہروں میں کینٹ کے علاقوں میں آج 8بجے سے 5 بجے تک ووٹنگ کا سلسلہ جاری رہا جس کے بعد اب ووٹوں کی گنتی کا عمل جاری ہے

IMAGE SOURCE: Dawn

انتخابی قواعد کے مطابق ، صرف ووٹر جنہوں نے پولنگ سٹیشن کے اندر شام 5 بجے تک اپنا ووٹ ڈالا تھا ، انہیں بعد میں ووٹ ڈالنے کی اجازت تھی۔ اس صورتحال نے کچھ پولنگ اسٹیشنوں پر پارٹی کے حامیوں کے ہجوم کو مایوس کیا۔ بعض نے ایک دوسرے کے خلاف نعرے بازی بھی کی۔

صبح 8 بجے پولنگ شروع ہونے کے چند گھنٹے بعد ، الیکشن کمیشن آف پاکستان نے کراچی کے کلفٹن کے وارڈ نمبر 4 میں خواتین کے پولنگ سٹیشن سے پولنگ ایجنٹ کے طور پر نقالی کرنے والے دو افراد کو حراست میں لے لیا۔

پولیس کے حوالے کیے گئے ‘جعلی پولنگ ایجنٹس’ کا تعلق مختلف سیاسی جماعتوں سے بتایا گیا اور وہ بغیر کسی دستاویز کے پولنگ اسٹیشن کے اندر موجود تھے

پاکستان تحریک انصاف کی جانب سے 659 آزاد امیدواروں کے علاوہ 143 امیدوار میدان میں ہیں۔ پاکستان مسلم لیگ (ن) نے 112 امیدواروں کی میدان میں اتارا ہے۔ جبکہ 104 امیدوار چھاؤنی کی نشستوں کے لیے پاکستان پیپلز پارٹی کے پلیٹ فارم پر انتخاب لڑ رہے ہیں۔

جماعت اسلامی کے 104 امیدوار میدان میں ہیں۔ کالعدم تحریک لبیک (ٹی ایل پی) نے 86 امیدواروں کو میدان میں اتارا ہے۔ متحدہ قومی موومنٹ پاکستان کے 42 امیدوار ہیں۔ جبکہ پاک سرزمین پارٹی (پی ایس پی) اور پاکستان مسلم لیگ (ق) نے بالترتیب 35 اور 34 امیدواروں کو میدان میں اتارا ہے۔ جبکہ 600 سے زائید آزاد امیدوار بھی میدان میں ہیں

کم از کم 2،197،741 ووٹرز – جن میں 1،154،551 مرد اور 1،043،190 خواتین شامل ہیں ، بغیر کسی وقفے کے صبح 8 بجے سے شام 5 بجے تک اپنے ووٹ کا حق استعمال کیا۔ 42 چھاؤنیوں کے 219 وارڈز کے لیے 1،644 پولنگ اسٹیشن اور 5،080 پولنگ بوتھ قائم کیے گئے تھے۔

تاہم ، متعدد وجوہات کی بناء پر 13 وارڈوں میں انتخابات نہیں ہو سکے: سات امیدوار بلامقابلہ منتخب ہوئے ہیں۔ کامرہ کے پانچ میں سے چار وارڈ میں ، انتخابی جھگڑوں کی وجہ سے انتخابات ملتوی کر دیے گئے ہیں۔ جبکہ پنو عاقل اور راولپنڈی میں ، امیدواروں کے انتقال کے بعد دو وارڈز میں انتخابات میں تاخیر ہوئی۔

جیت کے لیے ساری جماعتیں پر امید ہیں اور ہر جماعت نے اپنی اپنی استطاعت کے مطابق برپور کوشش کی ہے مگر بلا اور شیر آگے نظر آرہے ہیں

حساس پولنگ اسٹیشنوں پر سی سی ٹی وی کیمرے لگائے گئے تھے۔ پولنگ اسٹیشن کے احاطے کے باہر پولیس کے علاوہ نیم فوجی دستے بھ موجود تھےے۔ ای سی پی نے رینجرز اور ایف سی کے انچارج افسران کو مجسٹریٹ کے اختیارات دیئے گئے۔

الیکشن کمیشن کی جانب سے جاری ہدایات کے مطابق انتخابی عمل کے دوران پولنگ اسٹیشن کے اندر موبائل فون کے استعمال پر پابندی لگائی گئی تھی۔ یہ قاعدہ پولنگ ایجنٹوں پر بھی لاگو ہوتا ہے۔ تاہم ، پریزائیڈنگ افسران اور معاون پریذائیڈنگ افسران کو استثنیٰ دیا گیا تھا۔

اس وقت ووٹوں کی گنتی کا عمل جاری ہے اس بار دیکھتے ہیں ہیں کہ کون سی جماعت اس الیکشن میں بازی لے جاتی ہے آج کے الیکشن کے نتائیج کافی حد تک بتائیں گے کہ اگلے الیکشن میں کس جماعت کا پلہ بھاری ہوگا

Read Previous

اپوزیشن کو الیکٹرانک ووٹنگ پر اعتراض کیوں؟؟؟

Read Next

کنٹونمنٹ بورڈ کے انتخابات میں تحریک انصاف اور مسلم لیگ نون میں کانٹے کا مقابلہ

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *