تفصیلات کے مطابق پاکستان مسلم لیگ (ن) کے بانی نواز شریف نے وکیل قاضی مصباح ایڈووکیٹ کے ذریعے احتساب عدالت میں درخواست جمع کرائی جس میں کہا گیا کہ منجمد اثاثے بحال کرکے ملزمان کو رہا کیا جائے۔ پلاٹ الاٹمنٹ ریفرنس سے

نیب ترمیمی ایکٹ 2022 کے تحت احتساب بیورو کو 50 کروڑ سے کم مالیت کے مقدمات میں کارروائی کا اختیار نہیں ہے۔

تفصیلات کے مطابق نواز شریف کے خلاف دائر ریفرنس میں 13 کروڑ کی کرپشن کا الزام عائد کیا گیا۔

image source: The News International

نواز شریف کے وکیل کی جانب سے دائر درخواست میں کہا گیا کہ احتساب عدالت پہلے ہی اس ریفرنس میں تینوں ملزمان کو بری کرنے کا حکم دے چکی ہے۔
تفصیلات کے مطابق عدالت نے سابق وزیراعظم نواز شریف کو اشتہاری قرار دیتے ہوئے ان کی جائیداد ضبط کرنے کا حکم دیا تھا۔

نواز شریف کے وکیل نے درخواست میں استدعا کی کہ احتساب عدالت نواز شریف کے خلاف نیب ترمیمی آرڈیننس کے تحت کارروائی ختم کرے۔
قاضی مصباح ایڈووکیٹ نے درخواست میں یہ بھی کہا کہ عدالت نواز شریف کے ضبط شدہ اثاثے بحال کرنے اور انہیں ریفرنس سے بری کرنے کا حکم دے۔