آئی ایم ایف نے پاکستان کے لیے قرض پروگرام کی رپورٹ جاری کردی

Zohaib Alam
3 Min Read

تفصیلات کے مطابق آئی ایم ایف حکام نے ساتویں اور آٹھویں جائزہ رپورٹس سامنے رکھ دیں جس میں سابقہ ​​حکومت کی غلط پالیسیوں کو اجاگر کیا گیا تھا۔ رپورٹس سے پتہ چلتا ہے کہ پاکستان کی موجودہ حکومت نے قرض پروگرام کو بحال کرنے کے لیے کچھ اقدامات کیے ہیں، جن میں بنیادی سرپلس کی بنیاد پر بجٹ بنانا، شرح سود میں نمایاں اضافہ، ایندھن پر سبسڈی ختم کرنا، اور ایندھن اور بجلی کی قیمتوں میں اضافہ شامل ہیں۔

آئی ایم ایف نے آئی ایم ایف کی مارکیٹ پر مبنی شرح مبادلہ کو برقرار رکھنے پر زور دیا جبکہ ٹیکس ریونیو میں اضافے اور زرمبادلہ کے ذخائر میں اضافے پر زور دیا گیا ہے۔ اس کے علاوہ سماجی تحفظ اور توانائی کے شعبوں کو مضبوط بنانے کے مطالبے پر بھی زور دیا گیا۔

IMF holds off on releasing new forecast to the factor in Covid-19 impact -  Daily Timesرپورٹ میں کہا گیا ہے کہ قرض کے پروگرام کی جون 2023 تک توسیع سے ضروری بیرونی فنانسنگ کو محفوظ بنانے میں مدد ملے گی، لیکن پالیسی اصلاحات کے باوجود، قرض پروگرام کو غیر معمولی خطرات کا سامنا ہے۔

حالیہ برسوں میں سیاسی عدم استحکام کی وجہ سے مطالبات اور وعدے پورے نہیں ہوئے۔ عدم استحکام کی وجہ سے، پاکستان کو غیر مستحکم بیرونی پوزیشن اور اس کے کرنٹ اکاؤنٹ خسارے میں اضافے کا سامنا کرنا پڑا۔ تفصیلات کے مطابق زرمبادلہ کے ذخائر اور روپے کی قدر میں نمایاں کمی ہوئی جب کہ زرمبادلہ کے ذخائر اور بنیادی بجٹ خسارے سمیت پانچ اہداف پورے نہیں ہوسکے۔ اس کے علاوہ مزید سات ساختی اہداف پر عمل درآمد نہیں کیا گیا۔
رپورٹ میں کہا گیا ہے کہ رواں مالی سال مہنگائی کی شرح 20 فیصد رہنے کی توقع ہے جس کے باعث ملک بھر میں احتجاجی مظاہرے ہوسکتے ہیں جب کہ کرنٹ اکاؤنٹ خسارہ 2.5 فیصد تک ہوسکتا ہے۔ مالی سال کے اختتام پر قرض سے جی ڈی پی کا تناسب 72.1 فیصد رہے گا۔

آئی ایم ایف کے مطابق رواں سال معاشی ترقی کی شرح 3.5 فیصد رہنے کی توقع ہے جب کہ بجٹ خسارہ اس سال جی ڈی پی کا 4.4 فیصد رہنے کا امکان ہے۔

Share This Article
Leave a comment

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *