والد کے درخواست واپس لینے پر سپریم کورٹ نے دعا زہرا کیس نمٹا دیا

اسلام آباد: دعا زہرہ کے والد نے جمعرات کو سپریم کورٹ میں دائر درخواست واپس لے لی جس میں سندھ ہائی کورٹ کے اس فیصلے کو چیلنج کیا گیا جس میں ان کی بیٹی کو یہ فیصلہ کرنے کی اجازت دی گئی تھی کہ وہ اپنے والدین یا شوہر کے ساتھ کہاں جانا چاہتی ہے۔

تفصیلات کے مطابق سپریم کورٹ نے مہدی کاظمی کے وکیل کی جانب سے عدالت سے استدعا کی کہ ان کا موکل اپنی درخواست واپس لینا چاہتا ہے۔

اس سے قبل آج سماعت کے دوران جج جسٹس محمد علی مظہر نے زہرہ کے والد سے پوچھا کہ اگر ان کی بیٹی تفصیلی ملاقات کے بعد بھی ان کے ساتھ گھر نہیں جانا چاہتی تو ریاست کو کیا طریقہ کار اختیار کرنا چاہیے۔

Accept me and Zaheer with a big heart': Dua Zahra requests parents in first  interview
Image Source: Geo.tv

جسٹس سجاد علی شاہ نے کہا کہ گو کہ والدین کے جذبات کا احترام کرتے ہیں لیکن زہرہ کے اپنی پسند کے شخص سے شادی کے حق سے انکار کیا جا سکتا ہے جب کہ جسٹس منیب اختر نے ریمارکس دیئے کہ والدین کو ریلیف کے لیے سول عدالتوں سے رجوع کرنا چاہیے تھا۔

عدالت نے کہا کہ شادی کو فیملی کورٹ میں ہی چیلنج کیا جا سکتا ہے۔

تفصیلات کے مطابق بچی کے والد مہدی کاظمی کی جانب سے عدالت میں درخواست جمع کرائی گئی کہ دعا زہرہ کو پرنٹ، الیکٹرانک یا ڈیجیٹل میڈیا پر انٹرویو کے لیے آنے سے روکا جائے۔ درخواست میں یہ بھی کہا گیا ہے کہ لڑکی کے ملک سے باہر سفر پر پابندی عائد کی جائے اور اسے عدالت میں پیش کیا جائے۔

درخواست میں کہا گیا کہ ظہیر احمد کے بیان کے مطابق دعا تین سال سے ان کے ساتھ رابطے میں تھی اور وہ ان کے گھر چھوڑنے کے بارے میں جانتا تھا۔ یہ بھی کہا گیا کہ دعا نے اپنے انٹرویو میں بیرون ملک جانے کا عندیہ دیا تھا اور اس سلسلے میں انہیں عدالت کی طرف سے روکا جانا چاہیے۔

Sindh High Court grants time for reply in fund allocation case
Image Source: The Express Tribune

اس سے قبل دعا زہرہ کے والد مہدی کاظمی نے اپریل میں اپنی رہائش گاہ سے لاپتہ ہونے والی نوعمر لڑکی کے اغوا کیس سے متعلق سندھ ہائی کورٹ کے فیصلے کے خلاف سپریم کورٹ میں درخواست دائر کی تھی۔

تفصیلات کے مطابق درخواست میں موقف اختیار کیا گیا ہے کہ سندھ ہائی کورٹ نے 8 جون 2022 کو دعا زہرہ کو ان کی پسند کے مطابق فیصلہ کرنے کا حکم دیا اور فیصلہ دعا زہرہ کے بیان اور میڈیکل ٹیسٹ کی بنیاد پر کیا گیا۔

درخواست میں کہا گیا کہ نیشنل ڈیٹا بیس اینڈ رجسٹریشن اتھارٹی (نادرا) کے ڈیٹا اور تعلیمی اسناد میں دعا کی عمر 14 سال ہے۔

Read Previous

گورنر پنجاب بلیغ الرحمان نے تاجر برادری کے مسائل حل کرنے کے عزم کا اعادہ کیا

Read Next

سینئر جوائنٹ سکریٹری حج نے عازمین حج کو معیاری خدمات فراہم کرنے کا عزم کیا

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *