جعلی کرونا ویکسین بیچنے والوں سے خبردار رہیں

ایک طرف انسانی جانوں کو اپنی پڑی ہے اور دوسری طرف کاروبار کرنے والے درندوں کی شکل میں بازاروں میں پھیل چکے ہیں۔ جہاں اس خطر ناک مرض نے ساری دنیا کو ایک دوسرے کا ہمدرد بنا دیا ہے وہیں کاروباری حضرات کسی کے سگے نہیں۔

کاروبار کرنے والوں نے ہمیشہ سے عوام کو لوٹا ہے اور اس بات کی کبھی پرواہ نہیں کی کہ انسانیت کا عمل بھی کوئی قیمت یا عزت رکھتا ہے۔

کرونا کی عالمی وبا کے شروع میں جس طرح ماسک ملنا مشکل ہو گئے تھے اور وہ ماسک پہلے جنہیں کوئی پوچھتا نہیں تھا بازاروں اور میڈیکل اسٹورز سے غائب ہو گئے اسی طرح اب کرونا کی ویکسین جعلی آنا شروع ہو گئی ہے۔

اس حوالے سے حکومت نے اہم اقدامات شروع کر دئیے ہیں۔

Coronavirus Outbreak: Indian firms under scanner for selling fake COVID-19  medicines to European countries-Health News , Firstpost
Image Source: Firstpost

اسلام آباد : ڈریپ (ڈرگ ریگولیٹری اتھارٹی) نے کورونا کی جعلی اور اسمگلڈ ادویات بیچنے والوں کے خلاف گرینڈ ایکشن کا فیصلہ کرتے ہوئے ملک میں میڈیسن مارکیٹس کی سخت تحقیقات کی ہدایت کردی ہے۔

تفصیلات کے مطابق ڈریپ (ڈرگ ریگولیٹری اتھارٹی) نے کورونا کی جعلی اور اسمگلڈ ادویات بیچنے والوں کے خلاف گرینڈ ایکشن کا فیصلہ کرلیا گیا  ہے۔

 اس حوالے سے سی ای او ڈریپ ڈاکٹر عاصم روف کی ہدایت پر صوبائی دفاتر کو مراسلہ ارسال کردیا گیا ہے۔

مراسلے میں سی ای او ڈریپ نے ملک میں میڈیسن مارکیٹس کی سخت سرویلنس کی ہدایت کرتے ہوئے کہا  ہے کہ دنیا بھر کو کورونا ادویات کی قلت کا سامنا ہے۔

مفاد پرست عناصر کورونا ادویات کی قلت کا بھرپور فائدہ اٹھانے کے چکر میں انسانیت کے ساتھ کھلواڑ کر رہے ہیں۔

ڈریپ کا کہنا ہے کہ بعض عناصر جعلی اور اسمگلڈ کورونا ادویات فروخت کر رہے ہیں۔

 ڈریپ کی جانب سے سماج دشمن عناصر کے خلاف کاروائیاں شروع کر دی گئی ہیں۔

ان کاروائیوں میں جعلی، سمگلڈ کورونا ادویات بیچنے والے متعدد افراد پکڑے بھی جا چکے ہیں۔

مراسلے میں یہ بھی کہا گیا ہے کہ جعلی اور اسمگلڈ ادویات بیچنے والوں کے خلاف سخت کارروائیاں ناگزیر ہیں، ایسی کورونا ادویات بیچنے والوں کے خلاف کارروائیاں تیز کی جائیں اور صوبائی حکام ملک کی میڈیسن  مارکیٹ کی نگرانی مزید سخت کریں۔

Lancet, NEJM retract Covid-19 studies that sparked backlash
Image Source: Lancet

ڈریپ کے مطابق سرویلنس سے جعلی اور اسمگلڈ ادویات کا دھندہ کرنے والوں کا جلد از جلد  پتہ چلایا جائے اور اسمگل شدہ کورونا ادویات بیچنے والوں کے خلاف سخت کارروائی کی جائے۔

صوبائی دفاتر سماج دشمن عناصر کے خلاف کارروائیوں سے صدر دفتر کو آگاہ کریں۔

سی ای او ڈریپ ڈاکٹر عاصم روف کا کہنا تھا کہ جعلی اور اسمگلڈ ادویات کی فروخت ناقابل معافی جرم ہے، ایسی ادویات بیچنے والوں سے کوئی رعایت نہیں کی جائے گی۔

حکومت یہ سمجھتی ہے کہ عوام کیلئے عالمی معیار کی ادویات کی دستیابی ہی اولین ترجیح ہے۔

Read Previous

دلہن سارا زیور لے کر بھاگ نکلی

Read Next

حضرت علیؑ ، حضرت امام حسینؑ اور حضرت عباس علمدارؑ کے مزاروں کی کیفیت

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *