لاہور: پاکستان مسلم لیگ نواز کے سینیٹر مشاہد حسین سید نے منگل کے روز دعویٰ کیا کہ سابق وزیر اعظم نواز شریف اور سابق صدر پرویز مشرف کو ’سافٹ بغاوت‘ کے ذریعے ہٹایا گیا۔
پاکستان میں حکومتوں کو ہٹانے کے لیے دو طریقے استعمال کیے جاتے ہیں۔ چیئرمین سینیٹ کی دفاعی کمیٹی مشاہد حسین سید نے اے آر وائی نیوز سے خصوصی گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ ’’ایک فوجی بغاوت ہے جو ملک میں چار بار ہوئی، جب کہ ’سافٹ کوپ‘ دوسری چیز ہے جس میں ٹینک نہیں ہوتے۔

Musharraf wants to patch up with Nawaz Sharif | Pakistan – Gulf News

Image Source: Gulf News

سابق وزیر اعظم اور پی ٹی آئی کے چیئرمین عمران خان پر تبصرہ کرتے ہوئے، مسلم لیگ (ن) کے سینیٹر نے کہا کہ انہیں کسی ‘انفرادی’ کو نہیں سمجھنا چاہیے بلکہ ‘ادارہ’ اہم ہے۔
انہوں نے کہا کہ کالعدم تحریک طالبان پاکستان سے مذاکرات کا فیصلہ ملک کی سیاسی اور عسکری قیادت کا مشترکہ فیصلہ ہے۔ انہوں نے کہا کہ کچھ معاملات پر سیاست نہیں کی جانی چاہیے اور کہا کہ تمام سیاسی جماعتیں جولائی 2022 میں ٹی ٹی پی کے ساتھ مذاکرات کے حوالے سے پارلیمنٹ ہاؤس کی بریفنگ میں موجود تھیں۔
انہوں نے افسوس کا اظہار کیا کہ سٹریٹجک پالیسی واضح نہیں کہ ملک میں بڑھتی ہوئی دہشت گردی کا مقابلہ کیسے کیا جائے۔
ایک سوال کے جواب میں مشاہد حسین سید نے کہا کہ پاکستان نے طالبان کے قبضے کے بعد افغان حکومت کی وکالت کرکے ’غلطی‘ کی۔ انہوں نے مزید کہا کہ یہ سوچنا چھوڑ دیں کہ ‘ہمارے لوگ’ کابل پر حکومت کر رہے ہیں۔
انہوں نے حکومت پر زور دیا کہ وہ دہشت گردی کے خلاف پوری قوت کے ساتھ آگے بڑھے۔