اسلام آباد: وزیر مذہبی امور و بین المذاہب ہم آہنگی مفتی عبدالشکور نے پیر کو منیٰ، عرفات اور مزدلفہ میں حجاج کرام کو بہتر سفری سہولیات کی فراہمی پر تبادلہ خیال کیا۔
وزارت کے ترجمان محمد عمر بٹ نے بتایا کہ وزیر جو حال ہی میں چار روزہ حج ایکسپو 2023 – ایک بڑی نمائش اور کانفرنس میں شرکت کے لیے جدہ، سعودی عرب کے سرکاری دورے پر ہیں، نے ایک بس ٹرانسپورٹ کمپنی نیکبا سیرت کے چیئرمین اسامہ سمکاری سے ملاقات کی۔

Haj under govt scheme to cost up to Rs710,000 - Pakistan - DAWN.COM

Image Source: Dawn

انہوں نے بتایا کہ مفتی عبدالشکور سعودی ہم منصب سمیت کئی اہم شخصیات سے ملاقاتیں کریں گے اور مختلف اداروں کا دورہ کریں گے۔
انہوں نے کہا کہ کانفرنس میں شرکاء نے سعودی ویژن 2030 کی روشنی میں حج کے جدید انتظامات اور سہولیات کے بارے میں بتایا۔
انہوں نے کہا کہ اس سال حج کے درخواست دہندگان کے لیے پاکستان میں بینک اکاؤنٹ اور مشین ریڈ ایبل پاسپورٹ ہونا لازمی ہو گا جس کی میعاد 26 دسمبر سے پہلے ختم نہیں ہونی چاہیے، حج 2023۔
عمر بٹ نے کہا کہ فروری کے آخر تک حج درخواستیں طلب کیے جانے کا امکان ہے اور کابینہ کی منظوری کے بعد وزیر مذہبی امور حتمی حج پالیسی 2023 کا اعلان کریں گے۔
سعودی عرب نے 2023 میں سالانہ حج کی ادائیگی کے لیے پاکستان کے لیے تقریباً 180,000 عازمین کا کوٹہ مختص کیا ہے۔
حکومت پاکستان نے سعودی عرب کے ساتھ حج 2023 کے لیے دو طرفہ معاہدے پر دستخط کیے جس کے تحت 179,210 پاکستانی شہری سالانہ مناسک ادا کر سکیں گے۔
وفاقی وزیر برائے مذہبی امور و بین المذاہب ہم آہنگی مفتی عبدالشکور نے معاہدے پر دستخط کئے۔ سیکرٹری آفتاب اکبر درانی، جوائنٹ سیکرٹری حج آفتاب خان مروت، ڈی جی حج ساجد منظور اسدی بھی موجود تھے۔
سعودی عرب نے 65 سال کی عمر کی حد کو ختم کرنے کے ساتھ ساتھ پاکستان کے وبائی امراض سے پہلے کے حج کوٹے کو بحال کر دیا ہے۔ معاہدے کے مطابق 50 فیصد عازمین مدینہ ایئرپورٹ پہنچیں گے جب کہ نام تبدیل کرنے سے جدہ ایئرپورٹ پہنچیں گے۔