پاکستان اور نیوزی لینڈ کے درمیان کھیلا جانے والا میچ بغیر کسی نتیجے کے اختتام پزیر ہوگیا مگر میچ کا آخری گھنٹہ اس وقت دلچسپیپیدا کرگیاجب بابر اعظم نے نیوزی لینڈ کو 138 رنز کا ہدف 15 ااورز میںپورا کرنے کو کہا جس پر نیوزی لینڈرز نے اس چیلنج کو قبول کیا اور 7 اووروں میں 60 سے زیادہ رنز بطنا ڈالے اس موقع پر بابر الیون کے پسینے چھوٹ گئے مگر پھر کم روشنی نے پاکستان کو مسلسل چوتھا میچ ہارنے سے بچا لیا مگر آئندہ بابر اعظم کبھی اس طرح کا فیصلہ یا تجربہ نہیں کریں گے

 

 

 

پاکستان اور نیوزی لینڈ کے درمیان پہلا ٹیسٹ میچ کراچی سٹیڈیم میں کھیلا گیا جہاں پاکستان نے ٹاس جیت کر پہلے بلے بازی کا فیصلہ کیا ، قومی ٹیم نے پہلی اننگز میں 438 رنز بنائے ۔ امام الحق نے 24 ،کپتان بابر اعظم نے 161،سعود شکیل نے 22،چار سال بعد واپسی کرنے والے سرفراز احمد نے 86 ،آغا سلمان نے 103 رنز بنائے ۔

 

 

 

جواب میں نیوزی لینڈ کی ٹیم نے اپنی پہلی اننگز میں 612 رنز بنائے اور 9 کھلاڑیوں کے نقصان پر اننگز ڈکلیئر کر دی۔ ٹام لیتھم نے 113،ڈیون کانوے نے 92 رنز بنائے جبکہ کین ولیمسن 200 رنز کیساتھ ناٹ آؤٹ رہے ۔پاکستان نے پہلی اننگ میں 438 اور دوسری اننگ میں 318 رنز بنائے-عبدا للہ شفیق 17،امام الحق 96،شان مسعود 10،کپتان بابر اعظم

 

 

14 جبکہ سرفراز احمد نے 53 رنز بنائے ۔ سعود شکیل 55 رنز کے ساتھ ناقابل شکست رہے ۔ -کیم ولیم سن کو ان کا شاندار پرفارمنس پر مین آف دی میچ کا ایوارڈ دیا گیا مگر بابر اعظم دوسری اننگ میں تیسری بار بڑا سکور کرنے میں بری طرح ناکام رہے اور ٹیم کومشکل میں ڈال دیا مگر انعام الحق ،سرفراز احمد اور پھر محمد وسیم کی جارحانہ بیٹنگ نے پاکستان کو شرمناک شکست سے بچالیا –