پاکستان مسلم لیگ نواز نے 23 دسمبر کو پنجاب اسمبلی کی تحلیل روکنے کا منصوبہ بنایا ہے۔وزیر اعظم شہباز شریف کی زیر صدارت ان کی رہائش گاہ ماڈل ٹاؤن میں مسلم لیگ نون کی سینئیر قیاد ت کا پارٹی اجلاس ہوا۔ اجلاس میں خواجہ سعد رفیق، ایاز صادق، عطاء اللہ تارڑ اور ملک احمد خان نے شرکت کی جس میں اسمبلیوں کی تحلیل کے حوالے سے مشاورت کی گئی۔ مسلم لیگ (ن) نے فیصلہ کیا کہ وزیراعلیٰ پنجاب چوہدری پرویز الٰہی سے پنجاب اسمبلی میں اعتماد کا ووٹ حاصل کرنے کے لیے کہا جائے گا۔ اسی سلسلے ، پارٹی کے قانون سازوں ہدائت کی گئی ہے کہ اس ہفتے لاہور میں رہیں ۔

 

اگر وزیراعلیٰ الٰہی اعتماد کا ووٹ حاصل کرنے میں ناکام رہے تو وہ اسمبلی تحلیل کرنے کا اختیار کھو دیں گے۔ ایک روز قبل وزیر اعظم شہباز شریف نے مسلم لیگ ق کے سربراہ چوہدری شجاعت حسین سے ملاقات کی۔

 

 

 

وفاقی وزراء طارق بشیر چیمہ، چوہدری سالک حسین اور وزیراعظم کے معاون خصوصی ملک احمد خان موجود تھے۔ مسلم لیگ ن اور ق کے صدور نے ملک کو معاشی اور سیاسی بحران سے نکالنے کے لیے باہمی تعاون اور اشتراک کو مضبوط بنانے کا عہد کیا۔