لاہور: وفاقی حکومت پنجاب کے وزیر اعلیٰ چودھری پرویز الٰہی کے فتنہ انگیز انٹرویو کے بعد ‘انتظار کرو اور دیکھو’ کی پالیسی پر عمل پیرا ہے۔
وزیر اعظم شہباز شریف کی زیر صدارت پی ڈی ایم اتحاد کے اجلاس کی اندرونی کہانی کے مطابق ملک کی سیاسی صورتحال بالخصوص پنجاب کی صورتحال پر تبادلہ خیال کیا گیا۔

Dissolution of assemblies: Parvez Elahi dashes to Rawalpindi ahead of  Imran's announcement

Image Source: Geo

ہڈل کو وزیر اعظم شہباز شریف نے سابق صدر اور پاکستان پیپلز پارٹی کے شریک چیئرمین آصف علی زرداری اور پاکستان مسلم لیگ (ق) کے صدر چودھری شجاعت حسین کے ساتھ اپنی ملاقاتوں کے بارے میں بھی بتایا۔
ذرائع کا کہنا ہے کہ آصف علی زرداری نے خاص طور پر وزیراعلیٰ پرویز الٰہی کے انٹرویو کے بعد ’دیکھو اور انتظار کرو‘ کی پالیسی اپنانے کا مشورہ دیا، جب کہ شجاعت حسین نے پرویز الٰہی سے بات چیت کا عندیہ دیا۔
ذرائع نے بتایا کہ اجلاس کے شرکاء نے وزیر اعظم شہباز شریف کو مشورہ دیا کہ وہ پرویز الٰہی سے براہ راست بات چیت سے گریز کریں کیونکہ وہ ‘قابل اعتماد’ نہیں ہیں۔
نواز شریف نے کہا کہ ہم پرویز الٰہی سے بات نہیں کریں گے، جو بھی مذاکرات ہوں گے وہ آصف علی زرداری اور چوہدری شجاعت کریں گے۔
وزیراعلیٰ پرویز الٰہی
وزیر اعلیٰ پنجاب چودھری پرویز الٰہی نے ملکی اسٹیبلشمنٹ کو سیاستدانوں سے زیادہ سمجھدار قرار دیتے ہوئے کہا ہے کہ وہ چاہتی ہے کہ اسمبلیاں اپنی مدت پوری کریں۔
اے آر وائی نیوز کے پروگرام ’دی رپورٹرز‘ میں گفتگو کرتے ہوئے وزیراعلیٰ پنجاب نے انکشاف کیا کہ ملک کی اسٹیبلشمنٹ پنجاب اور خیبرپختونخوا (کے پی) کی اسمبلیوں کو تحلیل کرنے کے خلاف تھی اور چاہتی تھی کہ ایوان اپنی مدت پوری کریں۔
انٹرویو کے دوران، وزیراعلیٰ پرویز الٰہی نے پاکستان تحریک انصاف (پی ٹی آئی) کے چیئرمین عمران خان کو سابق چیف آف آرمی اسٹاف (سی او اے ایس) جنرل (ر) قمر جاوید باجوہ کے خلاف بات کرنے پر تنقید کا نشانہ بنایا اور انہیں سابق آرمی چیف کے ‘احساس’ کی یاد دلاتے ہوئے کہا.