راولپنڈی ٹیسٹ کرکٹ کی تاریخ کا ایک منفرد ٹیسٹ بن گیا جہان انگلینڈ نے پہلے دن 500 رنز بنا کر نیا عالمی ریکارڈ بنا ڈالا اس کے بعد 657 رنز بنائے 4 کھلاڑیوں نے چنچریاں سکور کین اور اس کے بعد پاکستانی ٹیم نے بھی بہترین کھیل پیش کیا پاکستانی اوپننگ جوڑے عبداللہ شفیق اور امام الحق نے 200 رنز کسے زیادہ کا اوپننگ سٹینڈ دیا اور پھر بابر اعظم نے بھی سنچری بناڈالی –

 

پاکستان نے 550 سے زیادہ رنز بنائے اور تیسری اننگ میں انگلینڈ کو اس طرح کھل کر کھیلنے نہ دیا مگر انگلینڈ نے انتہائی دلیرانہ فیصلہ کیا کہ میچ کو دلچسپ بنا یا جائے بین سٹروکس نے 373 رنز کا ٹارگٹ پاکستان کو دے دیا -پاکستان کی جانب سے امام الحق اور سعود شکیل نے بہترین مزاحمت کی اور ایک مرتبہ 50 اوورز میں پاکستان کو جیت کے لیے 80 رنز درکار تھے اور اس کے 5 کھلاڑی باقی تھے مگر اس وقت پانی کے وقفے کے فورا بعد پاکستانی کھیلنا بھول گئے اور جب آپ رنز نہیں بنائیں گے تو دوسری ٹیم سمجھ جاتی ہے کہ اب ہم آسانی سے انہین دبوچ سکتے ہیں

 

 

جب بیٹسمین کھیلنا چھوڑ دیں تو باؤلرز تجربات کرنا شروع کردیتے ہیں اور یوں وکٹ پر ٹھرنا بیٹسمین کے لیے مصیبت بن جاتا ہے اور یہی پاکستان کے ساتھ ہوا جونہی انگلینڈ نے دیکھا کہ اب یہ میچ ڈرا کرنے کے لیے کھیل رہے ہیں انھوں نے 11 کے گیارہ کھلاڑی وکٹ پر جمع کرلیے پاکستان کے 5 کھلاڑیوں نے 26 اوور کھیل کر 13 رنز بنائے اور اس کی پانچوں وکٹیں گرگئیں اور یوں پاکستان جیتا ہوا میچ ہار گیا –