بھارت میں ہراسگی کے واقعات میں خوفناک اضافہ ہوگیا ہے اور اب اس کی لپیٹ میں سکول کے بچے اور بچیاں بھی آرہے ہیں -بھارت سے اکثر خبریں آتی ہیں کہ سکول کی کمسن طالبات کو اس کے سکول کے کلاس فیلوز اجتماعی زیادتی کا نشانہ بنا ڈالتے ہیں ایسا ہی ایک اور افسوسناک واقعہ حیدر آباد میں پیش آیا -بھارتی شہر حیدرآباد کی پولیس نے نویں اور دسویں جماعت کے 5 طالبعلموں کو اپنی 17 سالہ کلاس فیلو لڑکی کو زیادتی کا نشانہ بنانے کے الزام میں گرفتار کر لیاہے ، سب سے زیادہ تکلیف دہ بات یہ تھی کہ ان اوباش لڑکوں نے اس شرمناک واقعے کی پوری ویڈیو بھی بنائی اور اسے واٹس ایپ پر شیئر بھی کیا ۔

 

اس واقعے کے بارے میں کہا جارہا ہے کہ یہ شرمناک واقعہ اگست میں پیش آیا تھا جب لڑکی گھر پر اکیلی تھی ، اس وقت ملزم نے اپنے مکروہ فعل کی ویڈیو بنائی اور پھر دس دن کے بعد ان میں سے ایک لڑکا دوبارہ لڑکی کو زیادتی کا نشانہ بنانے کیلئے گیا تاہم لڑکی نے شرم اور بدنامی کے خوف سے یہ بات اپنے گھر والوں سے کئی ماہ چھپائی رکھی مگر پھر اس نے اس دردناک سانحے کی تفصیل گھر والوں کو بتادی ۔ کیونکہ لڑکی کو خدشہ تھا کہ یہ اوباش پھر اسے بلیک میل کرکے اس کی عزت سے کھیلیں گے -جس پر پولیس کو شکایت درج کروائی گئی ۔ لڑکی کی شکایت پر پولیس نے کارروائی کرتے ہوئے مقدمہ درج کیا اور پانچوں لڑکوں کو گرفتار کر لیاہے-