پیپلز پارٹی کے دور کے سابق گورنر پنجاب پاکستان پیپلز پارٹی کے مرکزی رہنما لطیف کھوسہ بھی مصطفیٰ نواز کھوکھر کے بعد اعظم سواتی کے ساتھ کھڑے ہوگئے انھوں نے کہا جو اعظم سواتی کے ساتھ ہوا بالکل غلط کیا گیا وہ تو پھر سینیٹر تھے ایسی غلیظ حرکت تو کسی عام انسان کے ساتھ بھی نہیں کی جانی چاہئے-

 

 

ان کا کہنا تھا کہ ایک بات تو بالکل واضح ہے ملک نہیں چل رہا،کیا جمہوریت ایسے چلتی ہے؟پارلیمنٹ میں اس وقت بیٹھی جماعتوں سے نظام نہیں چلایا جا رہا، وہاں تو کورم ہی پورا نہیں ہوتا، دونوں جانب ایک ہی جماعت کے نمائندے بیٹھے ہوئے ہیں۔چیف الیکشن کمشنر، اوور سیز پاکستانیز کے ووٹنگ کے مسائل پر اعتراض ہے،چیف الیکشن کمشنر خود تو استعفیٰ دے کر جانے والے نہیں، نکالا نہیں جا سکتا۔سیاسی معاملات میں اسٹیبلشمنٹ یا عدلیہ کا کوئی ذکر نہیں ہوتا۔ آئین کے آرٹیکل 5 میں واضح ہے کہ وفاداری صرف ریاست سے ہونی چاہیے-لطیف کھوسہ کا حالیہ بیان بھی بتا رہا ہے کہ وہ بھی عنقریب پیپلز پارٹی سے اپنی راہیں جدا کرنے والے ہیں -اور پیپلز پارٹی ک انیا دھڑا پنجاب میں معرض وجود میں آنے والا ہے جو پی ٹی کے ساتھ الحاق کرکے الیکشن لڑے گا –