بدھ کو لاہور میں اورنج لائن ٹرین کے علی ٹاؤن ٹرمینل کے اندر ایک ڈرون گر کر تباہ ہو گیا۔ابتدائی معلومات کے مطابق ڈرون گزشتہ رات اورنج لائن یارڈ کے اندر خالی ٹریک پر گر کر تباہ ہوا۔ پولیس ریموٹ کنٹرول ڈرون طیارے کے مقام کا تعین کرنے کی کوشش کر رہی ہے۔
پولیس کے مطابق ڈرون کے اندر سے کوئی دھماکہ خیز مادہ نہیں ملا۔ تاہم، پولیس نے تصدیق کی کہ اس کے ساتھ ایک کیمرہ لگا ہوا ہے۔یہ بھی افواہ تھی کہ اس ٹرمینل کے نزدیک چینی کمپنی کے افراد بھی کام کرتے ہیں تاہم ابھی تک اس بات کی تصدیق نہیں ہوسکی –

ڈرون گرنے کی جگہ پر بم ڈسپوزل اسکواڈ سمیت متعلقہ حکام پہنچ گئے جب کہ مختلف پہلوؤں سے معاملے کی تحقیقات کا آغاز کر دیا گیا ہے۔اسپیشل پروٹیکشن یونٹ علاقے کی حفاظت کا ذمہ دار ہے۔ واقعہ کی اطلاع ملتے ہی یونٹ نے پولیس اور ماس ٹرانزٹ اتھارٹی کو اطلاع دی جبکہ انٹیلی جنس ایجنسیاں بھی معاملے کو دیکھ رہی ہیں۔تاہم کسی بھی محکمے نے ڈرون طیارے کے بارے میں کوئی بیان جاری نہیں کیا کہ یہ کہاں سے آیا اور کیوں آیا، ساتھ ہی یہ بھی کہ آیا یہ جاسوس ڈرون ہے یا نہیں۔امید ہے کہ آئی ایس پی ار جلد اس بارے میں اپنا بیان جاری کردے گا کیونکہ بھارتی میدیا اس طرح کی جھوٹی او ر بے پر کی خبروں کو کیش کرواکر پاکستان کا امیج خراب کرنے کی کوشش کرتا رہتا ہے -عوام جاننا چاہتی ہے کہ یہ ڈرون کس کا تھا اور کیسے یہ آگرا ؟