پہلا بین الاقوامی روبوٹک سرجری سمپوزیم SIUT میں شروع ہوا۔
کراچی: سندھ انسٹی ٹیوٹ آف یورولوجی اینڈ ٹرانسپلانٹیشن (SIUT) کے زیر اہتمام ملک میں پہلا 2 روزہ بین الاقوامی روبوٹک سرجری سمپوزیم جمعہ کو کراچی میں شروع ہوا جس نے 1200 سے زائد کامیاب روبوٹک طریقہ کار کا سنگ میل بھی عبور کیا۔

روبوٹک یونٹ گزشتہ سال SIUT میں شروع کیا گیا تھا اور اس کا افتتاح وزیر اعلیٰ سندھ سید مراد علی شاہ نے کیا تھا۔

سمپوزیم میں امریکہ اور برطانیہ کے سرکردہ روبوٹک سرجنز اور دیگر پاکستانی پیشہ ور افراد نے شرکت کی۔

Robots give surgeons a helping hand | Financial Times

image source: Financial Times

سمپوزیم کے ایک سیشن میں حصہ لیتے ہوئے ایس آئی یو ٹی کے ڈائریکٹر پروفیسر ادیب رضویسعید نے کہا کہ روبوٹک سرجری SIUT ٹیم کے سرشار پیشہ ور افراد کا ایک اور قدم ہے جنہوں نے نہ صرف اس جدید ترین جراحی کے طریقہ کار کو کامیابی سے انجام دیا بلکہ اب وہ ملک بھر میں ساتھی پیشہ ور افراد کو تربیت دینے کے لیے پرجوش ہیں۔ علاقہ

انہوں نے SIUT کے عزم کا اعادہ کیا کہ وہ جدید ترین ٹکنالوجی سے باخبر رہیں اور ان لوگوں تک اس کی دستیابی کو یقینی بنائیں جنہیں اس کی ضرورت ہے۔ انہوں نے کہا کہ یہ سہولت SIUT کے فلسفے کا حصہ ہے جس میں بغیر کسی امتیاز کے ہیلتھ کور فراہم کرنا ہے۔
افتتاحی سیشن کے بعد بین الاقوامی اور قومی ماہرین کا ایک پینل آیا جس میں انہوں نے اپنے اپنے ممالک میں روبوٹک سرجری اور تکنیک کے ارتقاء کی وضاحت کی۔

ایس آئی یو ٹی کے پروفیسر بابر حسن نے بین الاقوامی شراکت داروں کے ساتھ بامعنی تعاون کے ذریعے پاکستانی آبادی پر تشخیص اور پیش گوئی کی بصیرت پیش کی۔ انہوں نے اس بات پر بھی روشنی ڈالی کہ کس طرح SIUT صحت کی دیکھ بھال کے عمل میں اس تبدیلی کو سہولت فراہم کر رہا ہے۔

پینل ڈسکشن میں حصہ لیتے ہوئے، یو ایس اے کے ڈاکٹر خورشید گرو نے کہا کہ سرجنوں کی اگلی نسل پرانی ٹیکنالوجی پر عمل کیے بغیر روبوٹک سرجری کو اپنا سکتی ہے اور اسی طرح وہ پروسٹیٹک اور نچلے پیشاب کی نالی کی سرجریوں میں بہتر نتائج حاصل کر سکتے ہیں۔

برطانیہ سے تعلق رکھنے والے ڈاکٹر مارک سلیک نے بھی میڈیکل ٹیکنالوجی کے اس نئے شعبے کو آگے بڑھانے پر SIUT کی تعریف کی۔

ایس آئی یو ٹی کے ڈاکٹر ریحان محسن، ڈاکٹر ارسلان خان، ڈاکٹر ریاض لغاری، ڈاکٹر شاداب خان اور جنید نے بھی خطاب کیا۔