کراچی: ایڈمنسٹریٹر مرتضیٰ وہاب نے عہدے سے استعفیٰ دینے کا اعلان کردیا۔

وہ یہاں ایک پریس کانفرنس سے خطاب کر رہے تھے جب انہوں نے کہا کہ وہ کراچی ایڈمنسٹریٹر کے عہدے سے مستعفی ہو رہے ہیں۔

یہ پیشرفت عدالت کی جانب سے کراچی میٹروپولیٹن کارپوریشن کے ذریعے ٹیکس جمع کرنے سے روکنے کے بعد سامنے آئی۔

انہوں نے کہا کہ ٹیکس کراچی اور شہریوں کی بہتری کے لیے ہے۔ وہاب نے کہا کہ وہ گزشتہ ایک سال سے شہر کی بہتری کے لیے کام کر رہے ہیں اور کے ایم سی اپنے پاؤں پر کھڑا ہونے کو ہے۔

Appointment of Murtaza Wahab as Karachi administrator approved

image source: MM News Tv

’’میرے لیے وزیر اعظم اور وزیر اعلیٰ سے فنڈز مانگنا آسان ہوتا لیکن میں نے ایسا نہیں کیا۔‘‘
ایڈمنسٹریٹر نے کہا کہ ٹیکس کی وصولی کی رقم ان کے کھاتوں میں نہیں جانا تھا بلکہ یہ شہر کے ترقیاتی منصوبوں کے لیے تھا، انہوں نے مزید کہا کہ سیاسی تنقید شروع ہوئی حالانکہ انہوں نے پاور سپلائی کمپنی کو مشکل سے ٹیکس وصولی کے لیے راضی کیا تھا، اور معاہدہ دستخط کیا گیا تھا.

مصطفیٰ کمال اور وسیم اختر کے بطور میئر کراچی کے دور کو یاد کرتے ہوئے انہوں نے کہا کہ وہ اس وقت 200 سے 5000 روپے تک ٹیکس وصول کرتے تھے۔ دوسری طرف، میں نے کراچی والوں کو ریلیف دیا اور اسے کم کر کے 50 سے 200 روپے کر دیا۔

انہوں نے یہ بھی کہا کہ سیاست میں ایسے لوگ بھی رہے ہیں جو میٹروپولیٹن سٹی میں پائیدار ترقی کے حق میں نہیں ہیں۔

وہاب نے یہ بھی کہا کہ عدالت کو ٹیکس کی وصولی پر کوئی اعتراض نہیں تاہم کے الیکٹرک کے ذریعے وصولی کی اجازت نہیں دی۔