وفاقی حکومت سی سی پی او لاہور کے خلافوفاقی حکومت سی سی پی او لاہور کے خلاف کارروائی کرے گی۔
یہاں یہ بات قابل ذکر ہے کہ لاہور کیپیٹل سٹی پولیس آفیسر غلام محمود ڈوگر کے تبادلے پر وفاقی اور پنجاب حکومت کے درمیان اس وقت اختلافات مزید بڑھ گئے جب انہوں نے وزیراعلیٰ چوہدری پرویز الٰہی سے ملاقات کی اور اپنا عہدہ چھوڑنے سے انکار کردیا۔

وزیراعلیٰ پرویز الٰہی نے سول سیکرٹریٹ میں پولیس افسران سے گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ پنجاب حکومت کی باضابطہ اجازت کے بغیر کوئی بھی سول افسر وفاقی حکومت کے حوالے نہیں کیا جائے گا۔

ڈوگر کو فوری طور پر اسٹیبلشمنٹ ڈویژن میں رپورٹ کرنے کی ہدایت کے ایک دن بعد انہوں نے کہا، “پنجاب حکومت آئینی اور قانونی طور پر افسران کو روک سکتی ہے۔”

صوبائی حکومت کی جانب سے اسٹیبلشمنٹ ڈویژن کو رپورٹ کرنے کی ہدایت کے باوجود سی سی پی او لاہور نے مستعفی ہونے سے انکار کردیا۔
Federal govt will take action against CCPO Lahore

image source: BOL News

وفاقی حکومت نے اسٹیبلشمنٹ ڈویژن کے حکم کی تعمیل نہ کرنے پر کیپٹل سٹی پولیس آفیسر (سی سی پی او) لاہور غلام محمود ڈوگر کے خلاف ایکشن لینے کی تیاری مکمل کر لی ہے۔ اسٹیبلشمنٹ ڈویژن کے حکم کی تعمیل نہیں کررہے۔

پنجاب حکومت کی ہدایت پر سی سی پی او نے اسٹیبلشمنٹ ڈویژن کے رپورٹ کرنے کے حکم کے باوجود اپنا دفتر چھوڑنے سے انکار کر دیا تھا۔

وفاقی حکومت CCOP کو وجہ بتاؤ نوٹس جاری کرے گی اگر وہ سات دنوں کے اندر اپنا دفتر نہیں چھوڑتا ہے۔
سی سی او پی لاہور کی خدمات اگلے سال۔کارروائی کرے گی۔
یہاں یہ بات قابل ذکر ہے کہ لاہور کیپیٹل سٹی پولیس آفیسر غلام محمود ڈوگر کے تبادلے پر وفاقی اور پنجاب حکومتوں کے درمیان اس وقت اختلافات مزید بڑھ گئے جب انہوں نے وزیراعلیٰ چوہدری پرویز الٰہی سے ملاقات کی اور اپنا عہدہ چھوڑنے سے انکار کردیا۔

وزیراعلیٰ پرویز الٰہی نے سول سیکرٹریٹ میں پولیس افسران سے بات کرتے ہوئے کہا کہ پنجاب حکومت کی باضابطہ اجازت کے بغیر کسی بھی سول افسر کو وفاقی حکومت کے حوالے نہیں کیا جائے گا۔

ڈوگر کو فوری طور پر اسٹیبلشمنٹ ڈویژن میں رپورٹ کرنے کی ہدایت کے ایک دن بعد انہوں نے کہا، “پنجاب حکومت افسران کو آئینی اور قانونی طور پر روک سکتی ہے۔”

صوبائی حکومت کی جانب سے اسٹیبلشمنٹ ڈویژن کو رپورٹ کرنے کی ہدایت کے باوجود سی سی پی او لاہور نے مستعفی ہونے سے انکار کردیا۔