پاکستان میں مہنگائی نے 50سالہ ریکارڈ توڑ دیا ہے ہر چیز کی قیمت آسمان سے باتیں کررہی ہے مگر کچھ اشیا ایسی ہیں جن کی قیمت کے بڑھنے میں مافیا کا ہاتھ اور حکومتی کمزوری ہوتی ہے ان ہی آئٹمز میں سے ایک آٹا ہے جس سے غریب کے پیٹ کی آگ بجھانے والی روٹی بنتی ہے مگر یہ آٹا دوسرے صوبوں یا ہمسایہ ممالک کو بیچ دیا جاتا ہے تاکہ زیادہ منافع کمایا جاسکے اس مین نہ صرف فلور ملز مالکان بلکہ حکومتی اہل کار پھی ملوث ہوتے ہیں جبھی یہ آٹا غیر قانونی طور پر ایک علاقے سے نکل کر دوسرے علاقے تک پہنچتا ہے

 

 

 

تفصیلات کے مطابق صوبائی محکمہ خوراک نے اجناس کی بین الصوبائی سمگلنگ کی روک تھام کے لیے تاجروں اور فلور ملز کے خلاف کارروائی سمیت سخت اقدامات کرنے کا فیصلہ کیا ہے۔ذرائع نے اے آر وائی نیوز کو بتایا کہ اشیا کی نقل و حرکت کو روکنے کے لیے صادق آباد اور پشاور چیک پوسٹوں پر پولیس کی بھاری نفری تعینات کی گئی ہے۔

 

 

 

یہ بھی اطلاعات ہیں کہ پنجاب سے بھاری مقدار میں آٹا مال کی آڑ میں دوسرے صوبوں کو بھیجا جا رہا تھا، انہوں نے مزید کہا کہ اب یہ آٹا افغانستان بھی سمگل کیا جا رہا ہے۔ذرائع نے مزید دعویٰ کیا کہ پنجاب میں گندم اور آٹے کی قیمتیں دیگر صوبوں کے مقابلے میں کم ہیں اس لیے یہ گھناؤنا کام کیا جارہا ہے ۔ انہوں نے مزید کہا کہ ملوں کو ہدایت کی گئی ہے کہ وہ نقل و حرکت کو روکنے کے لیے ڈیٹا فراہم کریں۔ذرائع نے دعویٰ کیا ہے کہ محکمہ خوراک نے تاجروں سمیت ان تمام افراد کے خلاف بھی ایکشن لینے کا فیصلہ کیا ہےجو اس واردات میں ملوث ہیں ۔