اسلام آباد: اسلام آباد پولیس نے سابق وزیر اعظم اور پاکستان تحریک انصاف (پی ٹی آئی) کے چیئرمین عمران خان کو دہشت گردی کیس میں مشترکہ تحقیقاتی ٹیم (جے آئی ٹی) کے سامنے پیش ہونے کا ایک اور موقع دیا ہے۔
تفصیلات کے مطابق وفاقی دارالحکومت کی پولیس نے سابق وزیراعظم کو ایک اور نوٹس جاری کرتے ہوئے انہیں شام 5 بجے تھانہ مارگلہ میں جے آئی ٹی کے سامنے پیش ہونے کا کہا ہے۔

Pakistan's by-elections give Imran Khan hope of returning to power – Middle  East Monitor

Image Source: MEM

نوٹس میں پولیس نے کہا کہ عمران خان کو قبل از گرفتاری اور عبوری ضمانت اس شرط کے ساتھ دی گئی تھی کہ وہ تفتیش کاروں یا تفتیشی ٹیم کے سامنے پیش ہوں اور ان کے ساتھ تعاون کریں۔
نوٹس میں کہا گیا کہ ‘تاہم اس کیس میں سابق وزیراعظم جے آئی ٹی کے ساتھ تعاون نہیں کر رہے تھے اور شرط کی خلاف ورزی کر رہے تھے۔
اس سے قبل 6 ستمبر کو اسلام آباد ہائی کورٹ کے پی ٹی آئی چیئرمین جج زیبا چودھری کو مبینہ طور پر دھمکیاں دینے کے الزام میں اپنے خلاف درج دہشت گردی کے مقدمے میں پولیس کی تفتیش میں شامل ہوں گے۔
تفصیلات کے مطابق اسلام آباد ہائی کورٹ کے چیف جسٹس اطہر من اللہ اور جج سمن رفعت نے سابق وزیراعظم کے خلاف خاتون جج اور اسلام آباد پولیس کے اعلیٰ افسران کو مبینہ طور پر دھمکیاں دینے کے الزام میں درج دہشت گردی کے مقدمے کو چیلنج کرنے والی درخواست کی سماعت کی۔
واضح رہے کہ انسداد دہشت گردی کی عدالت (اے ٹی سی) نے دہشت گردی کیس میں عمران خان کی عبوری ضمانت میں 12 ستمبر تک توسیع کردی تھی۔
عمران خان کے خلاف 20 اگست کو اسلام آباد میں اپنی تقریر میں توہین آمیز زبان استعمال کرنے اور ایڈیشنل سیشن جج زیبا چودھری کو دھمکیاں دینے کے الزام میں تھانہ مارگلہ میں دہشت گردی کا مقدمہ درج کیا گیا تھا۔