اسلام آباد: وزیر خزانہ مفتاح اسماعیل کی جانب سے ستمبر 2022 کی پہلی ششماہی کے لیے ایندھن کی قیمتوں میں 10 روپے فی لیٹر اضافے کے اعلان کے بعد حکومت نے پیٹرول پر لیوی بڑھا کر 37.50 روپے فی لیٹر کر دی ہے۔

تفصیلات کے مطابق پیٹرولیم پر لیوی 17 روپے 50 پیسے فی لیٹر اضافے کے بعد 37 روپے 50 پیسے فی لیٹر ہو گئی۔ پی ایس او ایکسچینج ایڈجسٹمنٹ میں پیٹرول پر 0.41 روپے فی لیٹر کا اضافہ کیا گیا جس سے یہ 8.43 روپے فی لیٹر ہو گیا۔

ہائی سپیڈ ڈیزل پر ایکسچینج ایڈجسٹمنٹ 2.24 روپے اضافے کے بعد 5.87 روپے فی لیٹر کر دی گئی جبکہ اس پر لیوی 10 روپے فی لیٹر سے کم کر کے 7.50 روپے فی لیٹر کر دی گئی۔

لائٹ ڈیزل اور مٹی کے تیل پر پیٹرولیم لیوی 10 روپے فی لیٹر پر برقرار ہے۔

وفاقی حکومت نے بدھ کو ایک بار پھر ستمبر 2022 کی پہلی ششماہی کے لیے پیٹرولیم مصنوعات کی قیمتوں میں 10 روپے فی لیٹر اضافہ کردیا۔

فنانس ڈویژن کی جانب سے جاری نوٹیفکیشن کے مطابق پیٹرول کی قیمت میں 2 روپے 07 پیسے، ہائی اسپیڈ ڈیزل کی قیمت میں 2 روپے 99 پیسے فی لیٹر اضافہ دیکھا گیا۔ مٹی کے تیل کی قیمت میں 10.92 روپے فی لیٹر جبکہ لائٹ ڈیزل کی قیمت میں 9.79 روپے کا اضافہ ہوا۔

حالیہ اضافے کے بعد اب پٹرول 235.98 روپے، ہائی سپیڈ ڈیزل 247.43 روپے، مٹی کا تیل 210.32 روپے اور لائٹ ڈیزل کی قیمت 201.54 روپے ہو گی۔

آخری بار وفاقی حکومت نے اگست 2022 کے آخری 16 دنوں کے لیے پیٹرول کی قیمت میں 6.72 روپے فی لیٹر اضافہ کیا تھا۔