چینیوں کے مطابق، جدید معاشی ترقی صرف اسی صورت میں ممکن ہے جب سیاسی استحکام، سماجی یکجہتی اور اقتصادی پالیسیاں برقرار رہیں۔ وفاقی وزیر برائے منصوبہ بندی ترقی اور خصوصی اقدامات پروفیسر احسن اقبال نے یہ بات یہاں سسٹین ایبل ڈویلپمنٹ پالیسی انسٹی ٹیوٹ کے زیر اہتمام چائنا پاکستان اکنامک کوریڈور گرین ڈویلپمنٹ، اعلیٰ سطحی ڈائیلاگ سے خطاب کرتے ہوئے کہی۔

پاکستان میں روایتی طور پر سیاسی استحکام اور معاشی پالیسی میں تسلسل کا فقدان رہا ہے جس سے معاشی ترقی ناممکن ہے۔
احسن اقبال کے مطابق، چین کی صنعتی شفٹ 2020 میں طے شدہ تھی، اور “ہمارے پاس اس منتقلی سے فائدہ اٹھانے کی سہولیات نہیں تھیں۔”

image source; Medium

اس دوران چین کی صنعتی اکائیوں کو ویتنام اور جنوب مشرقی ایشیائی ممالک کی تنظیم (آسیان) کے ممالک میں منتقل کر دیا گیا۔
وزیر کے مطابق، حکومت پاکستان نے 2013 میں کے تحت نو خصوصی اقتصادی زونز کی تعمیر شروع کی تھی، لیکن پچھلی انتظامیہ کے دوران “ہم ان میں سے ایک کو بھی مکمل نہیں کر سکے”۔ ان کا دعویٰ ہے کہ اگر یہ تعمیر کیے گئے ہوتے تو اب تک چین کی صنعتی نقل مکانی پاکستان میں ہو چکی ہوتی۔

احسن اقبال کے مطابق، سابق وزیر اعظم نواز شریف نے 2013 میں چین پاکستان اقتصادی راہداری کا آغاز بنیادی ڈھانچے اور توانائی کے منصوبوں میں 46 ارب ڈالر کی سرمایہ کاری سے کیا۔
اس موقع پر انہوں نے کہا کہ چین اور پاکستان نے گرین اکانومی پر تعاون کا فیصلہ کیا ہے۔

انہوں نے کہا کہ چین کی موجودہ قیادت ماحول دوست صنعتی ترقی پر یقین رکھتی ہے اور مستقبل میں وہ نئے منصوبوں میں ماحول دوست ضوابط پر ایک پریمیم رکھیں گے۔
انہوں نے کہا کہ پاکستان اور چین سبز توانائی کے مختلف منصوبوں پر تعاون کر رہے ہیں جس سے ماحولیات کو فائدہ پہنچے گا۔

احسن اقبال کے مطابق سولر اور ونڈ انرجی کے زیادہ تر منصوبے ملک میں پائیدار اقتصادی ترقی کے نئے دور کا آغاز کریں گے۔
انہوں نے کہا کہ ماحولیات مخالف صنعتی ترقی نے بھی دنیا کی ماحولیات کی تنزلی میں اہم کردار ادا کیا اور اس کا نتیجہ پاکستان کو بھگتنا پڑا۔
انہوں نے کہا کہ آج پاکستان ماحولیاتی چیلنجز کا شکار پانچ بڑے ممالک میں سے ایک ہے۔