ماسکو: روس کے صدر ولادیمیر پوتن نے منگل کے روز واشنگٹن پر یوکرین کے تنازع کو طول دینے اور دنیا میں دیگر جگہوں پر تنازعات کو ہوا دینے کا الزام لگایا، جس میں امریکی ایوانِ نمائندگان کی اسپیکر نینسی پیلوسی کا تائیوان کا دورہ بھی شامل ہے۔

یوکرین کی صورت حال ظاہر کرتی ہے کہ امریکہ اس تنازع کو طول دینے کی کوشش کر رہا ہے۔ اور وہ بالکل اسی طرح کام کرتے ہیں، ایشیا، افریقہ اور لاطینی امریکہ میں تنازعات کے امکانات کو ہوا دیتے ہیں،” پیوٹن نے ٹیلی ویژن پر نشر ہونے والے ریمارکس میں، ماسکو میں ایک سیکورٹی کانفرنس کی افتتاحی تقریب سے ویڈیو لنک کے ذریعے خطاب کرتے ہوئے کہا۔

Russia-US relations 'maybe even worse' than Cold War: Kremlin spokesman -  ABC News
Image Source: ABC News

انہوں نے مزید کہا کہ “تائیوان کے حوالے سے امریکی مہم جوئی صرف ایک انفرادی غیر ذمہ دار سیاست دان کا دورہ نہیں ہے، بلکہ خطے اور دنیا کی صورتحال کو غیر مستحکم کرنے اور افراتفری پھیلانے کے لیے بامقصد، باشعور امریکی حکمت عملی کا حصہ ہے۔”

انہوں نے کہا کہ یہ دورہ “دوسرے ممالک کی خودمختاری اور اس کی (واشنگٹن) کی بین الاقوامی ذمہ داریوں کی بے عزتی کا ڈھٹائی کا مظاہرہ ہے”۔

پیوٹن نے کہا کہ “ہم اسے احتیاط سے منصوبہ بند اشتعال انگیزی کے طور پر دیکھتے ہیں۔

ماسکو اور واشنگٹن کے درمیان تعلقات اس وقت سے کشیدہ ہیں جب فروری کے آخر میں روس نے مغربی نواز یوکرین میں فوجی مداخلت شروع کی تھی۔

غیرمعمولی مغربی پابندیوں کی زد میں آکر پیوٹن نے افریقہ اور ایشیا کے ممالک خصوصاً چین کے ساتھ تعلقات کو مضبوط کرنے کی کوشش کی ہے۔

پیلوسی کے اگست میں خود مختار، جمہوری تائیوان کے دورے کے دوران ماسکو کلیدی اتحادی بیجنگ کے ساتھ مکمل یکجہتی میں تھا، جسے چین اپنا علاقہ سمجھتا ہے۔