اسلام آباد: وزیر اعظم شہباز شریف کا بدھ (کل) کو دوحہ، قطر کا دورہ متوقع ہے جس میں توانائی کے بڑھتے ہوئے بحران کے درمیان ایل این جی کے نئے معاہدے پر مشاورت کی جائے گی۔

دورے کے دوران وزیر اعظم قطری قیادت سے بات چیت کریں گے۔ وہ قطر کے ساتھ ایل این جی کے نئے معاہدے پر بھی تبادلہ خیال کریں گے اور عالمی قیمتوں میں اضافے کے ساتھ موجودہ سپلائی میں رعائت حاصل کریں گے۔

پاکستان توانائی کے شدید بحران اور ایندھن کی مہنگی درآمدات کے درمیان قطر سے موخر ادائیگیوں پر مزید گیس درآمدات کا خواہاں ہے۔ یوکرائنی جنگ کے درمیان یورپ میں گیس بحران کے تناظر میں ایل این جی بین الاقوامی مارکیٹ میں ایک نایاب چیز بن گئی ہے۔پاکستان کو ہر ماہ چار سے پانچ کارگو (تقریبا 400 سے 500 ملین مکعب فٹ گیس یومیہ) کی قلت کا سامنا ہے۔ حکومت گذشتہ دو ہفتوں کے دوران اسپاٹ مارکیٹ سے جولائی کے لئے ایک بھی کارگو محفوظ کرنے کی گذشتہ تین کوششوں میں ناکام رہی ہے۔

Liquified Natural Gas (LNG) 101 | NRDC
Image Source: NRDC

فروری 2021 میں. پی ٹی آئی حکومت نے یکم جنوری 2022 کو برینٹ آپریشنل کے 10.2 فیصد پر ایک معاہدے پر دستخط کیے۔ پی ایم ایل این حکومت نے 15 سالہ طویل معاہدے پر برینٹ کے 13.37 فیصد کی قیمت پر دستخط کیے تھے۔

یہ معاہدے توانائی کی ضروریات کو پورا کرنے کے لئے کافی نہیں ہیں کیونکہ پاکستان کو ہر ماہ کم از کم چار جگہ ایل این جی کارگو کی خریداری کے لئے ٹینڈر جاری کرنے ہوتے ہیں۔

اطلاعات کے مطابق پاکستان دوسرے معاہدے کے تحت اگست میں قطر سے ایل این جی ٹرم کے دو کارگو حاصل نہیں کر سکے گا جس کی قیمت برینٹ کا 10.2 فیصد ہے۔

ایل این جی ٹرم کے دو کارگوز کی عدم دستیابی اگست میں صورتحال کو مزید خراب کر دے گی۔ حکومت نے 39.8 ڈالر فی ایم ایم بی ٹی یو کی اب تک کی سب سے زیادہ لاگت پر دستیاب ہونے کے باوجود اسپاٹ مارکیٹ سے پانچ ایل این جی کارگو کے حصول کے ٹینڈر بھی جاری کیے ہیں۔

پاکستان ایل این جی لمیٹڈ (پی ایل ایل) نے تین بار ٹینڈر جاری کیے لیکن اسے پہلی دو کوششوں میں کوئی بولی نہیں ملی اور بالآخر اسے 39.8 ڈالر فی ایم ایم بی ٹی یو کی قیمت پر صرف ایک بولی ملی۔ حکومت نے بھاری قیمت پر کارگو نہ خریدنے کا فیصلہ کیا۔

وفاقی وزیر منصوبہ بندی و ترقی احسن اقبال نے کہا ہے کہ بین الاقوامی مارکیٹ میں گیس کی قیمت میں اضافہ ہوا ہے لیکن قطر نے پاکستان کو کم قیمت گیس کی پیشکش کی۔

وزیر اعظم ایل این جی سپلائی کے مزید معاہدوں کے لئے قطر جارہے ہیں اور موخر ادائیگی کے طریقہ کار کے تحت مزید ایل این جی کارگو کی فراہمی میں بھی کچھ ریلیف حاصل کرسکتے ہیں۔